پیاس اٹھی ہے ایسی سینے سے
جو بھڑک جائے اور، پینے سے

 




لے کے جاتا ہے پئے سیرِ منازل قرآن
وہ مقامات کہ مذکور ہوئے فی القرآن

 




کب کہا میں نے کہ مینار کلیسائی دے
بانٹنے والے مجھے فیضِ مسیحائی دے

 




عشق ہے طیرِ بے مکاں آئے نہ سرحدات میں
شعر و سخن تو قید ہے فاعل و فاعلات میں

 




مدّاحیٔ خواجہؐ نہیں محنت کے ثمر میں
ہیں ساری کرامات بس اِک حُسنِ نظر میں

 




شوقِ آوارگی کی بخشش ہے
درکِ حُسن و جمال و رعنائی

 




بہرِ لبم شرابِ طہور اسوۂ رسولؐ
در جامِ ناب وجہِ سرور اسوۂ رسولؐ

 




رکھ دے اِدھر بھی داغِ جبیں کو اُجال کر
اس رُخ بھی ایک روز تو رُوئے جمال کر

 




میں نے چاہا تھا مرے دل کو قرار آجائے
میں نے سمجھا کہ مرے دل کو قرار آیاہے 

 




این زمین در آن زمان پُربَلا
ناگہان چون زُلْزِلَتْ زِلْزَالَھَا