کربلا کی کہانی میں سنتا ہوں جب 
تھامتاہوں جگر‘
دل دھڑکتاہے آنکھیں برستی بھی ہیں
حسرتیں آرزوئیں تڑپتی بھی ہیں




پہنے نہیں لباسِ بہاراں ترے بغیر
بے کیف و رنگ و بو ہے گلستاںترے بغیر

 




اُس کو مرے سرمائے سے کچھ کام نہیں ہے
مُلا کے لیے تہمت و الزام نہیں ہے

 




رحمان کی تصدیق ہے طاغوت کا بطلان
میراثِ نبوت ہے حقیقت کا ہے عرفان

 




وہ اِک ادائے ناز سے کہتے ہوئے گیا
بولو تمھارا ہوش و خرد کون لے گیا

 




دل کی حیات یاد امامِ ہمام کی
سبطِ نبی حسین علیہ السلام کی

 




کلمہ خدا کا برحق وہ مسیحؑ ابن مریمؑ
اگر اس پہ ہو نہ ایماں تو زمیں فلک ہو برہم

 




عکسِ آئینہ رُو ابھارا کر
یوں خیال و سخن سنوارا کر

 




این زمین در آن زمان پُربَلا
ناگہان چون زُلْزِلَتْ زِلْزَالَھَا

 



درمعنی ٔایں کہ سیدة النسأ فاطمة الزہرا اُسوۂ کاملہ ایست​
(حکیم الامت علامہ اقبال کا خراج عقیدت) 

مریم از یک نسبتِ عیسیٰ عزیز
از سہ نسبت حضرتِ زہرا  عزیز