سوموار, 02 نومبر 2020 10:26

عبدالعزیز خالد

ہرکسی کو ہو بقدر ظرف عرفانِ رسول
کون کہہ سکتا ہے کیاہے حدِّ امکان رسولؐ
سِدرہ تک ہی پَر فشانی کرسکے روحُ الامیں
قاب قوسینِ اَو اَدنیٰ تک ہے جولانِ رسولؐ

کی طلبگاری کبھی اس نے نہ جز رزقِ کفاف
ہیں فقط ترک و توکل ساز و سامانِ رسولؐ
وقفِ حرماں کر سکیں اس کو نہ آلامِ جہاں
ہو ہویدا جس پہ رمزِ فقر و سلطانِ رسولؐ
ساکنانِ دہر پربے اختصاصِ خاص و عام
داورِ رحمت، کشادہ بابِ فیضان رسولؐ
پُر تبسم دیدۂ روشن پسِ دیدہ مگر
فکرِ امت سے رہے نم دیدہ ، مژگانِ رسولؐ
تا ابد آباد ہے وہ میرِ اَقوام و امم
تا قیامِ یومِ دیں ، قائم ہے ایوان رسولؐ
اس سے بڑھ کر اے مسلمانو!سعادت کون سی؟
ہوں مرے ماں باپ میرے بچے قربان رسولؐ
من گدائے خوشہ چینِ خرمنِ علمِ نبی
’’من فقیرِ طعم خوار ریزۂ خوانِ رسولؐ ‘‘
حق جومداحی کاہے مجھ سے ادا ہوتا نہیں
گو بحدِ استطاعت ہوں ثنا خوانِ رسولؐ
میں کہ خالدؔ نامی اک یا وہ سرائے ژاژخا
لکھ سکوں اے کاش حرفِ چند شایان رسولؐ



ماہنامہ پیام شمارہ ماہ نومبر
(ربیع الاول)
* * * * *
Read 199 times Last modified on سوموار, 02 نومبر 2020 10:28