منگل, 31 مارچ 2020 21:49



دنیا کا طاقتور ترین ملک امریکہ آج کہاں کھڑا ہے یہ وہ ملک ہے جس کو باہر سے دیکھنے والے دنیا کی محفوظ ترین جگہ تصور کرتے ہیں۔یہاں دنیا کی ہر سہولت کا خیال رکھا جاتا ہے اور پوری دنیا کے باسی یہاں رہنے کو اپنے لیے محفوظ سمجھتے ہیں

آج 30 مارچ حالات یہاں پہ تبدیل ہوچکے ہیں امریکہ میں ایک لاکھ افراد سے زیادہ متاثر ہوئے ہیں اور تقریباً 2200افراد اب تک لقمہ اجل بن چکے ہیں۔امریکی صدر ڈونلڈ ٹرمپ نے جب یہ وائرس چین کے صوبہ میں انسانی جانوں کو متاثر کر رہا تھا اس دوران اس کو صرف اور صرف سیاست اور بیان بازی کے ساتھ ڈیل کیا لیکن گزشتہ ہفتے سےامریکہ میں معاملات بگڑتے جا رہے ہیں. ۔


کرونا وائرس بہت تیزی سے امریکہ کی مختلف ریاستوں میں پھیلتا جارہا ہے امریکہ کی وفاقی تحفظ صحت ایجنسی کے بیماریوں پر قابو پانے والے ادارے  سی ڈی سی کے سابق ڈائریکٹر نے پیشنگوئی کی ہے کہ حالات زیادہ خراب ہو سکتے ہیں امریکہ کی آدھی آبادی کرونا کی لپیٹ میں آ سکتی  ہے اور ایک ملین سے زیادہ افراد اسے ہلاک ہوسکتے ہیں یہی صورتحال یہاں تک پہنچ گئی ہے کہ وہاں پر موجود غیر ملکی افراد  اپنے ملکوں کو واپس جانا شروع ہوگئے ہیں۔


 جنوری میں جب  ٹرمپ نے ورلڈ اکنامک فورم سے خطاب کیا  اس موقع پراس نے کہا کہ ہم نے کرونا وایرس کے لیے حفاظتی اقدامات کر رکھے  ہیں لیکن اب کی صورتحال بہت بگڑ چکی ہے ایک امریکی صحافی نے اپنے کالم میں صدر ٹرمپ اور ان کی انتظامیہ کی خوب درگت بنائی ہے اس نے لکھا ہے کہ کہ کتنے افسوسناک بات ہے  ہم ایسی دنیا میں رہ رہے ہیں کہ جس میں نجی کمپنیوں  اور  مخیر افراد کے ہاتھوں یرغمال بن کر رہے کر رہے گئے ہیں۔


ہم یہاں پر امریکہ کی ایک ریاست کا احوال مختصر عرض کرتے ہیں جو ٹرمپ اور ان کی بڑکیں  بے نقاب ہونے کے لیے کافی ہے ۔مختلف خبر رساں اداروں کے ذریعے یہ بات زبان زد عام ہو چکی ہے کہ امریکہ کی ریاست سیٹل ڈاکٹروں میں کے پاس ماسک موجود نہیں ہیں ڈاکٹر اور ہسپتال کا ديگر عملہ پلاسٹک شیٹ سے اپنے ما سک خود تیار کر رہا  ہے اسی ریاست کے ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ ہر ایک کو ایک ایک ماسک دے دیا گیا ہے اور اس کو زیادہ مدت کے لئے پہننے کا کہا گیا ہے صرف اتنا ہی نہیں امریکی محکمہ صحت سی ڈی ایس نے اعلان کرنے کی بھی کوشش کی ہے کہ ماسک کی کمی کی وجہ سے اگر منہ کو ڈھانپنے کے لیے ضروری ہو تو سکارف اور کپڑا استعمال کیا جائے ۔


یاد رہے کہ ماسک اس بیماری کے بچاؤ کے لیے بہت ضروری اور مہم ہےدوسری چیز جو اس وبا کے مریض جو سریس ہوں ان کے لئے وینٹی لیٹر ہیں جو اس وقت امریکہ کے پاس 160000 موجود ہیں ان میں سے 89000  سٹاک میں رکھے ہوئے ہیں  جس رفتار سے اس بیماری سے لوگ متاثر ہورہے ہیں بہت زیادہ ضرورت پڑ سکتی ہے.
امریکہ میں اسپتال سے متعلق ایسوسی ایشن کے مطابق امریکہ بھر کے اسپتالوں میں 924107 بستر دستیاب ہیں اس سے صاف پتہ چلتا ہے کہ موجودہ اور مطلوبہ سہولیات میں بہت فرق ہے ۔

اب اس کمی کو پورا کرنے کے لیے امریکہ نے 2ٹریلین کا بجٹ  کرونا سے نمٹنے کے لیے مختص کیاہے ہو سکتا ہے ٹرمپ انطامیہ  لوگوں کا اعتماد بحال کر سکیں صدر ٹرمپ جب سے اقتدار میں آئے ہیں ان کو سنجیدہ اور مدبر انسان تصور نہیں کیا جاتا اس کی وجہ وہ خود ہی ہیں اس صورتحال کو سامنے رکھتے ہوئے امریکی صدر ٹرمپ سے گزارش ہے کہ باقی دنیا اور امریکہ کے مسائل کو سنجیدگی سے لیں اور بڑک بازی سے پرہیز کریں۔

 بشکریہ: مبصر ڈاٹ کام
* * * * *
Read 175 times Last modified on منگل, 07 اپریل 2020 06:47

Latest from عرفان حسین الحسینی

تازہ مقالے

تازہ مقالے