سید ثاقب اکبر نقوی

ملی یکجہتی کونسل نے اپنے ایک حالیہ سربراہی اجلاس (منعقدہ 2 جولائی 2020ء) میں فرقہ واریت کے خلاف تجدید عزم کا اعلان کیا ہے۔ قائدین نے واضح طور پر کہا کہ ملی یکجہتی کونسل فرقہ واریت کے خلاف معرض وجود میں آئی ہے اور اس کی جدوجہد کے نتیجے میں پاکستان میں فرقہ واریت اور شدت پسندی کو عبرت ناک شکست ہوئی ہے۔

ہفته, 04 جولائی 2020 16:40

حج اور اس کی حکمتیں



تحریر: سید ثاقب اکبر

حضرت ابراہیمؑ نے اللہ کی پکار پر لبیک کہی۔ اس کی کبریائی کے زمزمے گنگنائے اور اس کے گھر کا طواف کیا۔ کیا اس کی آواز پر لبیک کہنے کے بعد اب اس کے غیر کی آواز پر لبیک کہنا جائز ہے؟ اس کی کبریائی کا زمزمہ دل و جاں کے ساز پر گنگنانے کے بعد اب کسی غیر کی عظمت وقوت کا گیت گایا جاسکتا ہے؟ اس کے گھر کا طواف کرنے کے بعد اس کے غیر کے گھر کا طواف کرنا روا ہے؟ جس پیغمبر اعظم ؐ نے فرمایا تھا کہ حج گناہوں کو یوں دھو دیتا ہے جیسے پانی میل کچیل کو صاف کر دیتا ہے۔ اس کے فرمان کے مطابق اگر اپنی روح کی میل کچیل صاف کر لی جائے حج ادا ہوتاہے۔ایسے ہی مطالب پر مشتمل مدیر اعلی ماہنامہ پیام کا یہ اصلاح شدہ مضمون قارئین پیام کی خدمت میں پیش کیا جارہا ہے ۔یہ مضمون جناب سید ثاقب اکبر کی نئی شائع ہونے والی کتاب معاصر مذہبیات سے ماخوذ ہے۔(ادارہ)



 
سید ثاقب اکبر نقوی

پاکستان میں جس طرح کے فتنے مذہب کے نام پر رونما ہو رہے ہیں، ان سے ظاہر ہوتا ہے کہ شیطان لگاتار اپنے اولیاء، نمائندگان اور دوستوں کو وحی کر رہے ہیں۔ قرآن حکیم اس بات کی پہلے ہی خبر دے چکا ہے کہ شیطان اپنے اولیاء کو وحی کرتے ہیں۔ سورہ انعام کی آیت 112 میں ہے:

بدھ, 24 جون 2020 15:54

فرقہ واریت سے ہوشیار



 
سید ثاقب اکبر نقوی

یوں محسوس ہوتا ہے کہ کچھ افراد یا گروہ نئے سرے سے فرقہ واریت کو پھیلانے میں سرگرم ہوگئے ہیں یا فرقہ واریت کے سلیپر سیلز پھر سے متحرک کیے جا رہے ہیں۔ اس کے لیے وہ تمام افراد جنھوں نے پاکستان میں فرقہ واریت کے خلاف سالہا سال جدوجہد کی ہے، انھیں اس طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے اور اپنی طاقتوں کو نئے سرے سے مجتمع کرنے کی ضرورت ہے، تاکہ فرقہ واریت کی نئی لہر کا مقابلہ کیا جاسکے۔



 
سید ثاقب اکبر نقوی

ایک تو بے ادبی اتنی بڑی بارگاہ میں اور دوسرا اس پر اصرار۔ افسوس صد افسوس بات اگر ایسی نہ ہوتی تو ہم اس موضوع پر کلام نہ کرتے۔حضرت فاطمۃ الزہراؑ کے مقام اور مرتبے پر مسلسل گفتگو ہو رہی ہے اور بے ادبی کرنے والے جسور کی خبر لینے والے خبر لے رہے ہیں۔ ہم چند گذارشات خصوصی توجہ کے لیے پیش کرتے ہیں۔