اھل بیت علیھم السلام

اھل بیت علیھم السلام (48)



کربلا کی کہانی میں سنتا ہوں جب 
تھامتاہوں جگر‘
دل دھڑکتاہے آنکھیں برستی بھی ہیں
حسرتیں آرزوئیں تڑپتی بھی ہیں




لب ہلے ‘ بولی یہ دیوار کہ آجا بی بی
کعبہ کہتا ہے کہ آمجھ میں سما جا بی بی

 




حاکمِ شام! تُو چل چال جو چل سکتا ہے
’’ابنِ زہراؑ رُخ کونین بدل سکتا ہے‘‘*

 




کیوں نہ رسول پاکؐ کے گھر سے وفا کریں 
واجب ہے سب پہ اجرِ رسالت ادا کریں 

 




کہنے لگے حسین ؑ کہ اے ربِّ دو سرا
دوراہے پر ہے ظالموں نے لا کھڑا کیا

 



فرزند بوترابؑ مرے آٹھویں امام
حاضر ہے لے کے عرضِ مودت ترا غلام 
اے وہ کہ ہے خواص پر بھی تیرا فیض عام
مِنْ کُلِّنَا عَلَیْکَ وَآبَائِکَ السَّلام




وہ جو اس دیں کی صداقت کے لیے برہان ہے
وہ حسینؑ ابن علیؑ خود داخلِ ایمان ہے

 




آنکھوں میں سمٹ آئی صحراؤں کی پہنائی
دل ڈوب گیا غم میں کربل کی جو یاد آئی

 




ماذا علی من شمّ تربۃ احمد
ان لایشمّ مدی الزّمان غوالیا

 




اک سوز کہانی ہے اک درد کا قصّہ ہے
اور اس سے سوا یہ غم کس کنبے نے جھیلا ہے

 




مسکراتی ہے قضا شمشیر دوسر دیکھ کر
سرنگوں ہے بابِ خیبر دست حیدرؑ دیکھ کر

 




ذکر کر ہادیانِ برحق کا
حق کے چشموں کو یوں شمارا کر

 




پہنے نہیں لباسِ بہاراں ترے بغیر
بے کیف و رنگ و بو ہے گلستاںترے بغیر

 




کوثرِ الفت کے چھینٹے میرے گیتوں کا نکھار
شعر بکھرائیں مرے تیری مودّت کی پھوار