منگل, 31 مارچ 2020 22:06



کرونا کا تقاضا ہے:"چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں"

مِری آنکھوں میں مَت دیکھو
کہیں یہ روک دیں تم کو
ہیں آنکھیں دل کا آئینہ
تو اِن سے درد ٹپکے گا
مرے لہجے پہ مَت جاؤ
کہ لہجہ غم ہی اُگلے گا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
وہ جس نے وصل لکھاتھا
اب اُس نے ہجر لکھا ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے جاناں! ہاتھ مت تھامو
مرا یہ ہاتھ رہنے دو
بس اپنی یاد کا سرمایہ میرے ساتھ رہنے دو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
چلو وعدہ بُھلا ڈالو
چلو پھر خواب میں ملنے چلی آنا
کبھی اس حدِّفاصل سے پَرے آکر
بس اپنی چَھب دکھا جانا
۔۔۔۔۔۔۔
کرونا کا تقاضا ہے
"چلو اک بار پھر سے اجنبی بن جائیں ہم دونوں"

 

* * * * * 

 

 

 

Read 260 times
More in this category: « روز قیامت