ہفته, 07 مارچ 2020 16:52




شوقِ آوارگی کی بخشش ہے
درکِ حُسن و جمال و رعنائی

 

اضطراب نظر سے سمجھی ہے
پہلو پہلو مرادِ زیبائی

بے زباں حسن کائنات رہے
گر نہ تازہ سفر کی بات رہے



بند آنکھوں کو کیا خبر کیا ہے؟
دھوپ‘ چھائوں‘ خزاں‘ بہار کا رنگ
کب بھلا ٹھہرے دل نے دیکھا ہے
دم بدم قلبِ بے قرار کا رنگ

ہاں رہے گی ہمیشہ بے مفہوم 
زندگانی کے کیف و رنگ کی بات
ہاں رہے گی ہمیشہ بے معنی
ہر تمنا ہر اک امنگ کی بات
ذوق خود آگہی جو عام نہ ہو
بے سکونی کو گر قیام نہ ہو
تجربہ نو جو گام گام  نہ ہو

پر یہ ڈر ہے اے جانِ جاں مجھ کو
تجربہ آپ کی جدائی کا
جاں کی قیمت پہ ہی تمام نہ ہو

ہونٹ رکھ دوں کنارِ جام فراق
تلخیٔ جام سے لرزتا ہوں
اک نیا تجربہ کروں تو سہی
اس کے انجام سے لرزتا ہوں

* * * * * 

Read 127 times