سوموار, 24 فروری 2020 07:30




یوں زمیں پر آئے گا دَورِ بلا
ہوگی یک دم زُلْزِلَتْ زِلْزَالَھَا

 

یوں یہ دھرتی اَخْرَجَتْ اَثْقَالَھَا
ہوکے حیراں قال الانسان ما لھا؟

اٹھ پڑیں گے مرنے والے کُلُّھُمْ
لوگ سب تاکہ  یَرَوْا اَعْمَالھم


ہو گا  جس  کا   ذَرَّۃ  خیرا  یَّرَہ
یا کہ  ہو گا   ذرّۃ  شَرّا  یَّرَہ

اُس گھڑی خورشید تاباں کُوِّرَتْ
کوہسار اتنے گراں بھی سُیِّرَتْ

سارے دریائوں کا پانی سُجِّرَتْ
آگ دوزخ کی بشدت سُعِّرَتْ

ایسے عالم میں کہ جنت اُزْلِفَت
جان لے ہر کوئی خود مَا اَحْضَرَت

*ایک ایرانی شاعرحبیب چایچیان کے کلام کا منظوم ترجمہ


* * * * * 

Read 215 times

Related items