تجھے پاکر _____ 
میں سمجھا ہوں کہ مجھ میں یہ ہنر بھی ہے

 




آواز مت بلند ہو اِس بارگاہ میں
کیا کچھ چھپا کے رکھ دیا اِک انتباہ  میں

 




مسکراتی ہے قضا شمشیر دوسر دیکھ کر
سرنگوں ہے بابِ خیبر دست حیدرؑ دیکھ کر

 




اُس کو پانے کے لیے غیر پہ تکیہ کرتے
اِس سے بہتر ہے کہ اس کام سے توبہ کرتے

 




لب ہلے ‘ بولی یہ دیوار کہ آجا بی بی
کعبہ کہتا ہے کہ آمجھ میں سما جا بی بی

 




میں کیوں کہوں کہ ترے بن بسر نہیں ہوتی
ضرور ہوتی ہے، ہوتی ہے پر نہیں ہوتی

 




’’دُر دریائے سرمد است علیؑ
جانشینِ محمدؐ است علیؑ‘‘

 




رکھ کے انگشت غم کے سازوں پر
کوئی اُکسا رہا ہے نغموں پر

 




پہنے نہیں لباسِ بہاراں ترے بغیر
بے کیف و رنگ و بو ہے گلستاںترے بغیر